Azaranica is a non-biased news aggregator on Hazaras and Hazarajat...The main aim is to promote understanding and respect for cultural identities by highlighting the realities they are facing on daily basis...Hazaras have been the victim of active persecution and discrimination and one of the reasons among many has been the lack of information, awareness and disinformation...... To further awareness against violence, disinformation and discrimination, we have launched a sister Blog for youths and youths are encouraged to share their stories and opinions; Young Pens

Tuesday, August 30, 2011

کوئٹہ میں بم دھماکہ، پانچ ہلاک



دھماکے کا نشانہ بننے والے افراد کا تعلق شیعہ مسلک سے ہے
پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں ایک بم دھماکےمیں پانچ افراد ہلاک اور دس زخمی ہوگئے ہیں۔

یہ دھماکہ میں گلستان روڈ پر اس وقت ہوا جب لوگ عید کی نماز ادا کرنے کے بعد واپس اپنے گھروں کی جانب جا رہے تھے۔

دھماکے میں ہلاک اور زخمی ہونے والے بیشتر افراد کا تعلق شیعہ مسلک سے ہے۔

اس دھماکے میں زخمی ہونے والوں میں بچے بھی شامل ہیں جنہیں دیگر زخمیوں کے ہمراہ فوری طور پر کوئٹہ کے سول ہسپتال اور سی ایم ایچ منتقل کر دیا گیا جہاں بعض زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کےنامہ نگار ایوب ترین کے مطابق پولیس حکام کا کہنا ہے کہ بظاہر دھماکہ ایک گاڑی میں نصب ریموٹ کنٹرول بم پھٹنے سے ہوا تاہم تحقیقات کے بعد ہی اصل صورتحال سامنے آئے گی۔

دھماکے سے جائے وقوعہ پر کھڑی متعدد گاڑیوں کو نقصان پہنچا اور ان میں آگ لگ گئی۔ اس واقعہ کے بعد سکیورٹی اہلکاروں کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی اور علاقے کو گھیرے میں لے لیا۔

وزیراعلٰی بلوچستان نواب اسلم رئیسانی نے اس واقعے کی مذمت کی ہے اور پولیس کو دھماکے کے ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی کا حکم دیا ہے۔

ادھر ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی کے چیئرمین عبدالخالق ہزارہ نے دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے صوبے اور بالخصوص کوئٹہ شہر میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والے مسلمانوں کے خلاف کارروائیوں پر تشویش ظاہر کی ہے۔

انہوں نے بلوچستان کی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ اس قسم کی کارروائیاں کرنے والے افراد کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے۔

Source,

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/08/110831_quetta_blast_zs.shtml

No comments:

Post a Comment